کورونا وائرس پر قابو پانے کیلئےاہم اقدام، مارکیٹیں ہفتے میں 2 دن بند کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد:حکومت نے کورونا کی چوتھی لہر پر قابو پانے کیلئے اہم فیصلے کرتے ہوئے مارکیٹوں کے اوقات کار رات 10 سے کم کرکے 8 بجے تک کر دئیے ہیں جبکہ مارکیٹیں ہفتے میں دو دن بند رہیں گی۔

یہ اہم فیصلہ وزیراعظم عمران خان کے زیر صدارت اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے انسداد کورونا کے قومی ادارے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے سربراہ اسد عمر کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کی منظوری کے بعد کچھ فیصلے کیے ہیں۔ بندشوں سے کمزور طبقہ بہت متاثر ہوتا ہے۔ ہم نے دیہاڑی دار طبقے کا بھی خیال رکھنا ہے۔ کورونا کی تین لہروں میں سمارٹ لاک ڈاؤن کی پالیسی اپنائی گئی تھی، اس وقت مریضوں کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔

اسد عمر نے کہا کہ کورونا کی صورتحال کے پیش نظر فیصلہ کیا گیا ہے کہ تمام مارکیٹیں ہفتے میں دو دن بند رہیں گی لیکن ہفتہ وار دو چھٹیوں کا فیصلہ صوبائی حکومتیں خود کریں گی۔

ان کا کہنا تھا کہ منگل سے رات 8 بجے سے تمام مارکیٹیں اور بازار بند کرنے کی پابندی ہوگی۔ صورتحال کو دیکھ کر مزید اقدامات اٹھانا پڑے تو اٹھائے جائیں گے۔ راولپنڈی، لاہور، فیصل آباد اور ملتان میں بندشیں لگیں گی۔ ہم نے 22 کروڑ لوگوں کی حفاظت کرنی ہے۔

این سی او سی کے سربراہ نے کہا کہ ان ڈور ڈائننگ بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے تاہم ٹیک آوے کی سہولت 24 گھنٹے دستیاب ہوگی۔ پبلک ٹرانسپورٹ پر مسافروں اور دفاتر میں ملازمین کی تعداد بھی 50 فیصد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے باعث سندھ کے بعد پنجاب میں سب سے زیادہ اموات ریکارڈ کی گئی ہیں۔ گزشتہ روز کورونا وائرس سے 40 اموات ہوئیں جن میں سے 19 اموات وینٹیلیٹرز پر موجود مریضوں کی تھیں۔

اعدادو شمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں 4 ہزار 858 افراد کے کووڈ۔ 19 ٹیسٹ مثبت آئے۔ملک کے 4 بڑے شہروں میں وینٹیلیٹرز پر کووڈ۔ 19 کے مریضوں کے تناسب کے لحاظ سے اسکردو میں 25 فیصد، پشاور میں 26 فیصد،لاہور 21 فیصد اور اسلام آباد میں 33 فیصد مریض ہیں۔اسی طرح سے ملک کے چار بڑے شہروں میں آکسیجن کی سہولیات والے بستروں پر کورونا کے مثبت کیسز کے تناسب کے لحاظ سے ایبٹ آباد میں 55 فیصد، کراچی میں 57 فیصد، پشاور میں 29 فیصد اور گلگت میں 33 فیصد مریض ہیں۔

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کووڈ 19 کے 56 ہزار 414 ٹیسٹ کیے گئے جن میں سے سندھ میں 18 ہزار 618، پنجاب میں 20 ہزار 49، خیبر پختونخوا میں 10 ہزار 338، اسلام آباد میں 3 ہزار 76، بلوچستان میں 2 ہزار 83، گلگت بلتستان میں 945، آزاد کشمیر میں 1 ہزار 305 ٹیسٹ شامل ہیں۔ اب تک ملک بھر میں کووڈ۔19 سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 9 لاکھ 43 ہزار 20 ہو چکی ہے۔

بلوچستان میں کورونا کا کوئی بھی مریض اس وقت وینٹیلیٹر پر نہیں ہے جبکہ ملک بھر میں مختص وینٹیلیٹرز پر 318 مریض ہیں۔ ملک بھر میں ایکٹو کیسز کی تعداد 73 ہزار 213 ہے۔

ملک بھر میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 10 لاکھ 39 ہزار 695 ہے جن میں سے آزاد کشمیر میں 24 ہزار 891، بلوچستان میں 30 ہزار 502، گلگت بلتستان میں 8 ہزار 212، اسلام آباد میں 88 ہزار 93، خیبر پختونخوا میں 1 لاکھ 44 ہزار 848، پنجاب میں 3 لاکھ 57 ہزار 735 اور سندھ میں 3 لاکھ 85 ہزار 414 مریض ہیں۔

ملک بھر میں کورونا وائرس سے جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 23 ہزار 462 ہو چکی ہے۔جن میں سے سندھ میں 6 ہزار 21 اموات جبکہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 19 مریض ہسپتالوں جبکہ 1 مریض گھر میں قرنطینہ کے دوران میں اس وائرس سے جاں بحق ہوا۔

پنجاب میں 11 ہزار 67 اموات جبکہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 7 مریض ہسپتالوں میں جبکہ 1 مریض گھر میں قرنطینہ کے دوران اس وائرس سے جاں بحق ہوا،خیبر پختونخوا میں 4 ہزار 468 اموات جبکہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 6 مریض ہسپتالوں میں اس وائرس سے جاں بحق ہوئے،
اسلام آباد میں کل 803 اموات،بلوچستان میں کل 328 اموات، گلگت بلتستان میں 147 اموات جبکہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 3 مریض ہسپتالوں میں اس وائرس سے جاں بحق ہوئے،
آزاد کشمیر میں اس وائرس سے 628 اموات ہو چکی ہیں جبکہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 3 مریض ہسپتالوں میں اس وائرس سے جاں بحق ہوئے۔اب تک ملک بھر میں کووڈ۔19 کے 1 کروڑ 61 لاکھ 8 ہزار 532 ٹیسٹ کیے جا چکے ہیں۔ملک بھر میں کووڈ۔19 کے علاج کیلئے مختص 639 ہسپتالوں میں 3 ہزار 889 مریض زیر علاج ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں