وفاقی حکومت کا تحریک لبیک پاکستان پر پابندی لگانے کا فیصلہ

اسلام آباد: حکومت نے تحریک لبیک پر پابندی لگانے کا فیصلہ کرلیا۔ وزیر داخلہ شیخ رشید نے کہا کہ ان کے کردارکی وجہ سے پابندی لگائی جا رہی ہے، پنجاب حکومت نے تنظیم پر پابندی لگانےکی سفارش کی، سمری کابینہ کو بھجوا رہے ہیں۔

وزیر داخلہ شیخ رشید نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تحریک لبیک پر پابندی کا فیصلہ انسداد دہشتگردی ایکٹ کے تحت کیا گیا، پنجاب حکومت نے تنظیم پر پابندی لگانے کی سفارش کی، پابندی سے متعلق سمری کابینہ کو بھیج رہے ہیں، مظاہرین نے ایمبولینسز روکیں اور راستے بند کیے، مظاہروں میں 2 پولیس اہلکار شہید اور 340 زخمی ہوئے، مظاہرین ہر صورت فیض آباد اور اسلام آباد آنا چاہتے تھے۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ ہم قرار داد اسمبلی میں اتفاق رائے سے پیش کرنا چاہتے تھے، مظاہرین نے پولیس اہلکاروں کو اغوا کر کے مطالبات منوانے کی کوشش کی، جو معاہدہ کیا اس پر قائم تھے اور قائم ہیں، وہ ایسا مسودہ چاہتے تھے جس میں سارے لوگ یہاں سے فارغ ہو جائیں۔

بعد ازاں دنیا نیوز کے پروگرام ‘’دنیا کامران خان کیساتھ’’ میں گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید کا کہنا تھا کہ تحریک لبیک پر پابندی کے معاملے پر تمام لوگ آن بورڈ ہیں۔ سوچ سمجھ کر فیصلہ کیا کیونکہ یہ لوگ دھرنے کی سیاست سے پیچھے نہیں آنا چاہتے۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ پنجاب حکومت کے کہنے پر تحریک لبیک پر پابندی کا معاملہ وفاقی کابینہ میں بھیج دیا ہے، کل یا پرسوں پابندی لگ جائے گی۔ کابینہ میں چاروں صوبوں کی نمائندگی موجود ہے۔

ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ کبھی بھی تحریک لبیک کے ساتھ نہیں تھا، میری کبھی خادم رضوی سے بھی کوئی ملاقات نہیں ہوئی تھی، مسلم لیگ کو اسمبلی میں ترامیم سے میں نے روکا تھا۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ پولیس کے 2 اہلکار شہید جبکہ سینکڑوں زخمی ہوئے۔ پولیس کے لوگوں نے بڑی قربانیاں دیں۔ جی ٹی روڈ، فیض آباد، موٹر ویز کلیئر ہے تاہم کراچی کے ایک دو علاقوں میں مسئلہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ تحریک لبیک کی جانب سے پولیس اہلکاروں کو یرغمال بنا کر نامناسب مطالبہ کیا گیا۔ ہم نے معاملات بہتر کرنے کی بہت کوشش کی لیکن تحریک لبیک باز آنے کو تیار نہیں، اس لئے سب نے پابندی کے معاملے پر اتفاق کیا ہے۔

قبل ازیں وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید کی زیر صدارت امن و امان کی صورتحال پر اجلاس ہوا جس میں وفاقی وزیر مذہبی امورنور الحق قادری، سیکرٹری داخلہ، آئی جی پنجاب، چیف کمشنر اسلام آباد، آئی جی اسلام آباد، رینجرز اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے نمائندوں نے شرکت کی۔ اجلاس میں آئی جی پنجاب انعام غنی اور کمشنر راولپنڈی بذریعہ ویڈیو لنک شریک ہوئے۔ اجلاس میں مذہبی جماعت کی جانب سے احتجاج کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔

اجلاس میں شہید ہونے والے پولیس کے جوانوں کو خراج تحسین پیش جبکہ فیصلہ کیا گیا کہ قانون ہاتھ میں لینے والوں سے سختی سے نمٹا جائے گا۔ شیخ رشید نے رینجرز اور ضلعی انتظامیہ کو مختلف علاقوں میں سڑکیں کلیئر کرانے پر مبارکباد دی۔ وزیر داخلہ نے شرکاء کو ہدایت کی کہ ریاست کی رٹ کو ہر صورت یقینی بنایا جائے، موٹرویز، جی ٹی روڑ اور باقی بڑی سڑکیں ٹریفک کے لئے کلیئر کروالی ہیں، اسلام آباد، راولپنڈی میں لیاقت باغ، ترنول، بارہ کہو، روات کے علاقوں کو ٹریفک کے کئے کھلوا لیا گیا، رینجرز نے پولیس اور انتظامیہ کے ساتھ ملکر بہت زبردست کام کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں